HomePoetryشجر سے دھوپ مانگی جارہی ہے۔۔۔  اندھیرے نور ہوتےجارہے ہیں


شجر سے دھوپ مانگی جارہی ہے۔۔۔  اندھیرے نور ہوتےجارہے ہیں

نظر سے  دور   ہوتے   جارہے  ہیں 
بہت    مغرور  ہوتے   جارہے   ہیں 

مرا   ذوق      تماشہ     اللہ    اللہ
صنم‌  مجبور    ہوتے  جارہے   ہیں 

پرانے زخم پھر ہنسنےنہ لگ جائیں 
سر   منصور    ہوتے   جار ہے  ہیں 

کوئی  مختار   ہوتا     جارہا    ہے 
کہ  ہم   مجبور   ہوتے  جارہے ہیں

شجر سے دھوپ مانگی جارہی ہے 
اندھیرے   نور   ہوتے  جارہے  ہیں

اماں جانوں کی ہم سےمانگتےتھے 
جو  اب  تیمور  ہوتے  جارہے  ہیں 

کرم    کافور    ہوتا     جارہا    ہے 
ستم   دستور  ہوتے  جارہے    ہیں

دکھائے تھے  جو  سپنے زندگی نے 
وہ  چکنا  چور  ہوتے  جارہے  ہیں

سنا  ہے   تھے  کبھی شاہین بزمی 
جو  اب  عصفور ہوتے جارہے ہیں 

کلام :سرفراز بزمی ( سوائی مادھوپور ،راجستھان، انڈیا)

RELATED ARTICLES
- Advertisment -